علم الرمل اور جنات

کیونکہ ہمارا اکثر اہلِ تصوف سے رابطہ رہتا ہے اس ہی لئے 2012 میں مقامِ قطب پر فائز ایک اللہ کے ولی پاکستان تشریف لائے، تو فیض کی خاطر اُن کی بارگاہ میں حاضر ہوا۔ ایک دن فرمانے لگے “شاہ، رمل کے استعمال سے قبل حصار کر لیا کرو” ۔

مجھے بڑا تعجب ہوا، تو عرض کی کہ “رمل کونسا چلہ کشی، یا عبادتوں سے منسوب علم ہے، یہ تو کبھی بھی کوئی بھی کسی بھی جگہ کسی بھی حالت میں زائچہ بنا لے۔ اس میں حصار کی کیا ضرورت؟

تو ہنس کر فرمانے لگے ” آپ علم الرمل و علم الجفر کو اتنا آسان نہ سمجھیں،  یہ دونوں علوم راز ہیں اور اگر کوئی ان کو سیکھ کر بد دیانتی یا بد احتیاطی سے استعمال کرے تو اتنی سخت رجعت ہوتی ہے کہ اتارے نہیں اترتی۔ کیونکہ علم الرمل ریت سے منسوب ہے اور ریت زمین پر ہوتئ ہے اور زمین عالمِ سفلی ہے اس لئے جب بھی اس کی اشکال بنائی جائیں گی، جنات حاضر ہو جائیں گے (چاہے نظر آئیں یا نہ)  جو ان اشکال سے منسوب ہیں، اور رمال کی حالت کا جائزہ لیتے ہوئے اُس کو جواب کی آگہی میں صحیح یا غلط کی طرف نشاندہی کروائیں گے۔اگر رمال شریعت کی پابندی کے ساتھ اس علم کو بروئے کار لائے گا تو اُس کی معاونت ہوگی، ورنہ شدید رجعت اور نقصان کا اندیشہ ہے”۔

اس گفتگو کے بعد موصوف نے مجھے خاص اجازتوں سے نوازا، اور ایک خاص حصار بھی عنایت فرمایا۔

اس واقعہ کے بعد میں نے متعدد بار جب بھی رمل پر مضامین لکھے ، ایک عجیب سی کیفیت طاری رہی اور باقاعدہ محسوس ہوتا تھا کہ میں کمرے میں اکیلا نہیں۔

بالکل اس ہی طرح علم الجفر کی بھی ایک معتبر حیثیت ہے۔ کیونکہ یہ علم حروف پر مبنی ہے اور ان ہی حروف سے سارا قرآن سجایا گیا ہے۔ ان حروف کا احترام لازم ہے۔ میں نے دوسری زبانوں میں بھی کئی مضامین لکھے مگر جو تاثیر عربی و اردو حروف میں ہے وہ بیان سے باہر ہے۔ تحریر کچھ بھی کیوں نہ ہو، حروف سے بنائے کئے جملوں میں ایک الگ ہی تاثیر دیکھی ہے۔

ایک عجیب بات جو تحقیق میں سامنے آئی وہ یہ کہ۔

ہم نے ان علوم کو “شادی کب ہوگی” جادو کس نے کیا” کروانے والا مرد ہے یا عورت” فلاں کا فلاں سے کوئی تعلق تو نہیں” اولاد کب ہوگی؟ گھر میں اثر ہے یا نہیں” کیا وہ مجھ سے سچا پیار کرتا ہے” جیسے فضول سوالوں کے لئے استعمال کرنا شروع کیا۔ کیونکہ یہ سودا واقعی بکتا ہے تو عاملین نے اس ہی لئے اپنی دکان لگائی ہوئی ہے۔ ورنہ ان علوم کا اصل مقصد صرف اور صرف یہ معلوم کرنا ہونا چاہئے تھا کہ”

میرے لئے کس اسم مبارکہ کا ورد بہتر ہے؟
میرے لئے کونسی سورۃ کا حفظ کرنا بہتر ہے؟
کونسا اسم پڑھوں کہ شادی ہو جائے؟
گویا ہر دنیاوی مسئلے کے لئے اسما ء مبارکہ کی تلاش ان علوم سے ہو سکتی تھی۔مسئلہ چاہے شادی کا ہو، رزق کا، نوکری کا، ان علوم کو بروئے کار لاکر ہم اوراد و وظائف معلوم کر سکتے تھے۔ کیوں کہ یہ ہی اصل حق ہے ان علوم کا، جو ہم نے ادا نہ کیا، ہم پوشیدہ رازوں، گناہوں کی جانکارنی میں لگ گئے اور رجعتوں کا شکار ہو گئے۔

خاص الخاص شادی کے سلسلے میں یا کسی دنیاوی معاملات میں   یہ بات لازمی اختیار کی جائے کہ جب کوئی رشتہ آجائے تب  یا کسی بھی اہم مسئلے میں ، سب سے پہلے استخارہ کیا جائے، استخارہ کو تمام علوم پر فضیلت حاصل ہے ہر معاملے میں۔